india

سوال # 175686

عدت میں لڑکی ماں کا انتقال ہوجائے تو کیا وہ ماں کے گھر جاسکتی ہے؟

Published on: Jan 12, 2020

جواب # 175686

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa:442-318/sn=5/1441



دوران عدت شدیدضرورت (مثلا طبیعت بہت ناساز ہوجائے یا گھر منہدم ہوجائے )کے بغیر گھر سے باہر نکلنا جائز نہیں ہے، کسی قرابت دار کے انتقال پر ان کی زیارت شدید ضرورت کے تحت نہیں آتی ؛ اس لیے لڑکی کے لیے ماں کے انتقال پر ان کی زیارت کے لیے جانا جائز نہیں ہے ۔



(وتعتدان) أی معتدة طلاق وموت (فی بیت وجبت فیہ) ولا یخرجان منہ (إلا أن تخرج أو یتہدم المنزل، أو تخاف) انہدامہ،(الدر المختار وحاشیة ابن عابدین (رد المحتار) 5/ 225?،فصل فی الحداد?،ط: زکریا، دیوبند)نیز دیکھیں: فتاوی دارالعلوم دیوبند 10/309?، سوال:1074، ط: کراچی)



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات