India

سوال # 176134

غیرمسلم سے مسجدکی تعمیرکرانا کیسا ہے ؟مع دلیل ضرورت ہے ؟

Published on: Feb 6, 2020

جواب # 176134

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa:493-407/L=6/1441



غیر مسلم سے مسجد کی تعمیر کرانے کی گنجائش ہے ۔(امدادالاحکام:۳/۵۳۵)



ولا یکرہ عندنا دخول الذمیّ المسجد الحرام، وکرہہ الشّافعیّ لقولہ تعالی: {إنَّمَا المُشْرِکُونَ نَجَسٌ فَلاَ یَقْرَبُوا المَسْجِدَ الحَرَام بَعْدَ عَامِہِمْ ہَذا}، ولأنّ الکافر لا یخلو عن جنابة.وأُجیبَ بأنّہ محمولٌ علی منعہم أَن یدخلوہ طائفین عراةً، أو مستولین، وعلی أہل الإسلام مستعلین، وبأنّ النجاسة محمولةٌ علی خبث عقائدہم ، وکرہہ مالک فی کل مسجد اعتباراً بالمسجد الحرام لعموم العلة وہی النجاسة. ولنا: ما فی سنن أبی داود عن عثمان بن أبی العاص أنّ وفد ثقیف لمّا قدموا علی النبیّ صلی اللہ علیہ وسلم أنزلہم المسجد لیکون أرقّ لقلوبہم، فاشترطوا علیہ أنْ لا یُحْشَرُوا ولا یُعْشَرُوا ولا یُجَبَّوا. فقال رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم: لکم أنْ لا تُحْشَروا ولا تُعْشَروا، ولا خیر فی دین لیس فیہ رکوع. والتجبیة بالجیم والموحدة وضع الیدین علی الرکبتین. وفی مراسیلہ عن الحسن أنّ وَفْدَ ثقیف أتوْا رسول اللہ، صلی اللہ علیہ وسلم فضرب لہم قُبْة فی مؤخر المسجد لینظروا صلاة المسلمین، فقیل لہ: یا رسول اللہ أتنزلہم فی المسجد وہم مشرکون؟ قال: إن الأرض لا تتنجس بابن آدم.(شرح الوقایة لعلی الحنفی 5/۱۸۷۔ 188)



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات