عقائد و ایمانیات - تقلید ائمہ ومسالک

India

سوال # 44109

دریافت طلب چیز یہ ہے کہ تقلید شخصی کے وجوب پر اجماع کس زمانے ہوا اور کس کس مجتہد نے اجماع نقل کیا اور کس کتاب میں؟ با حوالہ جواب دے کر مشکور ہو ں ، غیر مقلدین نے ہمیں چیلنج دیا ہے کہ اہل سنت کے پاس اسکا کوئی جواب نہیں۔ امید کہ جلد جواب دیں گے ۔

Published on: Feb 20, 2013

جواب # 44109

بسم الله الرحمن الرحيم

فتوی: 505-505/M=4/1434

تقلید پر اجماع چوتھی صدی ہجری میں ہوا، اور اس تقلید شخصی پر اجماع کو ابن حجر نے فتح المبین شرح الاربعین میں، اور ابن خلدون نے ”مقدمہ ابن خلدون“ میں اورحضرت شاہ ولی اللہ صاحب محدث دہلوی رحمہ اللہ نے اپنی کتاب ”عِقد الجید“ میں اور امام طحطاوی رحمہ اللہ نے ”حاشیہ الدر المختار“ میں نقل کیا ہے، ولما اندرست المذاہب الحقة إلا ہذہ الأربعة کان اتباعہا اتباعا للسواد الأعظم والخروج عنہا خروجًا عن السواد الأعظم (عقد الجید: ۸۳، نقلاً عن جواہر الفقہ: ۲/۳۰) وقال ابن خلدون... ووقف التقلید في الأمصار عند ہوٴلاء الأربعة ودرس المقلدون عن سواہم وسد الناس باب الخلاف (مقدمہ تاریخ ابن خلدون بحوالہٴ بالا) من کان خارجا عن ہذہ الأربعة فہو من أہل البدعة والنار (حاشیة الطحطاوی علی الدر المختار بحوالہ جواہر الفقہ: ۲/۳۱)

واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات