معاشرت - طلاق و خلع

India

سوال # 175308

زید کی بیوی نے زید کو کچھ پڑھا ہوا کھانا کھلانے کی کوشش کی تاکہ زید ہمارے قبضہ میں رہے زید نے دیکھ لیا تو زید نے تنبیہ کی کہ اگر تم نے آئندہ ایسی حرکت کی تو طلاق دے دوں گا مگر زید کی بیوی نے دوبارہ پھر کھلانے کی کوشش کی تو زید نے کہا تم نے ایسا کیوں کیا میں نے کہا تھا نا کہ طلاق دے دوں گا تو زید کی بیوی نے کہا کہ میں نے اس کھلانے کی کوشش کی کہ اگر طلاق دے بھی دِیں گے آپ تو پھر سے نکاح کر لیں گے تو زید نے کہ جاؤ تم سے جتنی بار نکاح ہوگا اتنی بار طلاق تو کیا زید کی طلاق ہو گئی اگر ہو گئی تو نکاح کوئی صورت ہے یا حرام ہو گئی وہ عورت؟

Published on: Dec 25, 2019

جواب # 175308

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa:369-285/sn=4/1441



سوال میں جو الفاظ ذکر کیے گیے ہیں ، یہ تعلیق کے الفاظ ہیں، انشائے طلاق کے نہیں ؛ اس لیے صورت مسئولہ میں ان الفاظ سے کوئی طلاق واقع نہیں ہوئی۔ آئندہ اگر کبھی خدا نخواستہ طلاق کی نوبت آئے تواُس وقت تفصیل لکھ کر آگے کیا کرنا ہے ، کیسے کرنا ہے ، اس سے متعلق حکم معلوم کرلیں ۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات