معاشرت - طلاق و خلع

Pakistan

سوال # 155552

کیا فرماتے ہیں علماے دین اس مسئلہ کہ بارے میں کہ ایک آدمی نے قسم اٹھائی جس میں یہ الفاظ استعمال کئے ہیں کہ "اب اگر میں نے مشت زنی کی تو جب بھی میں نکاح کرو تو میرے اوپر میری بیوی حرام ہے ۔ " اور کچھ عرصے بعد اس سے مشت زنی سر زرد ہو گئی ۔ اب مسئلہ دریافت طلب یہ ہے کہ آیا یہ شخص کسی صورت میں نکاح کر بھی سکتا ہے یا نہیں؟ اگر نکاح کرنے کی کوئی صورت ممکن ہے تو براہ کرم اس کا طریقہ بتا دیجیے اور اگر ان کے لیے نکاح کی کوئی بھی صورت جائز نہیں تو ان کی وضاحت فرما دیں۔
بحوالہ جواب دے کر ممنون فرمائیں۔

Published on: Nov 19, 2017

جواب # 155552

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa:95-69/D=2/1439



صورت مسئولہ میں اگر کسی لڑکی سے وہ آدمی نکاح کرتا ہے تو فواراً اس پر طلاق بائنہ واقع ہوجائے گی؛ لیکن پھر اسی لڑکی سے اگر تجدید نکاح (دوبارہ نکاح) کرلیتا ہے خواہ اسی مجلس میں ہو تو یہ دوسرا نکاح جائز ہوجائے گا۔



اسی طرح مذکورہ لڑکی سے پہلا نکاح کرنے کے بعد جب کہ اس پر طلاق پڑگئی اگر کسی دوسری لڑکی سے نکاح کرے گا تو وہ نکاح درست ہوجائے گا اور اس پر کوئی طلاق نہیں پڑے گی۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات