معاملات - دیگر معاملات

Pakistan

سوال # 174587

عاقل بالغ اورپُختہ عمر کا ہے، اس کے والد کے خلاف کوئی لین دین کے معاملہ کا دعویدار ہے اور والد اقرار نہیں کرتے ، جب معاملہ کی چھان بین کی گئِی تو مدعی اپنی جگہ حق پر ہے، لہذا سوال یہ ہے کہ سائل اپنے والد کی جانب سے والد سے خفیہ داعی کو قرضہ لوٹا سکتا ہے ؟

Published on: Nov 18, 2019

جواب # 174587

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa:225-178/N=3/1441



صورت مسئولہ میں اگر مدعی کا دعوی از روئے شرع صحیح ودرست اور ثابت ہے اور والد کو مطلع کرکے قرضہ ادا کرنے میں والد کی طرف سے بیٹے کے حق میں سخت ناراضگی یا ہنگامے کا اندیشہ ہے تو ایسی صورت میں بیٹے کے لیے اپنی جیب سے والد صاحب کا قرضہ خفیہ طور پر ادا کرنے میں شرعاً کچھ مضائقہ نہیں ہے۔ اور اگر والد کی طرف سے سخت ناراضگی وغیرہ کا اندیشہ نہیں ہے تو بیٹے کو چاہیے کہ والد کے علم میں لاکر ان کا قرضہ ادا کرے؛ تاکہ ان کا بھی دل مطمئن ہوجائے۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات