معاملات - وراثت ووصیت

India

سوال # 176120

میرے والد کا انتقال ہوگیا ہے اورمیرے والد کے پانچ بھائی ہے ہر ایک کو میرے دادا نے ایک ایک گھر دیا ہے اورمیرے والد کے نام پر کُچھ اور جگہ بھی ہے تو اب اس پر کس طرح سے حصہ ہوگا کیوں کے میرے دادا کو اب زادہ کُچھ سمجھتا بھی نہیں ہے اس کا جواب شریعت سے دیں نوازش ہوگی۔

Published on: Jan 21, 2020

جواب # 176120

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa : 541-402/B=05/1441



صورتِ مذکورہ میں آپ کے والد صاحب کو دادا جان کی طرف سے جو گھر ملا ہے وہ اور اس کے علاوہ اُن کے نام پر کچھ اور جگہ ہے وہ سب والد صاحب کے انتقال کے بعد ترکہ ہو گیا جو ان کے تمام جائز ورثہ کے درمیان حصہٴ شرعی تقسیم ہوگا۔ آپ نے اپنے والد صاحب کے ورثہ کو نہیں لکھا ، کتنے لڑکے اور کتنی لڑکیاں ہیں، کتنے بھائی ہیں، آپ کی والدہ بھی حیات ہیں یا نہیں؟ تمام زندہ موجود ورثہ کی تفصیل لکھیں، تو ان کے درمیان ترکہ تقسیم کرکے ہر ایک کا حصہ متعین کر دیا جائے گا۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات