معاملات - وراثت ووصیت

India

سوال # 175996

ایسے مرد کی وراثت کی تقسیم کے بارے میں شرعی احکام کے بارے میں تفصیل بتائیں جو خود بے اولاد ہو اور اس کی بیوی بھی اُس سے قبل ہی فوت ہو چُکی ہو۔ رشتے داروں میں دو سگے بھائی اور ایک سگی بہن زندہ ہو اور ایک سگے بھائی اور ایک سگی بہن کا بھی انتقال ہو چکا ہو لیکن فوت شدہ بھائی اور بہن کی اولادیں موجود ہوں۔ وراثت میں وہ شخص مکانات، گاڑی، جائداد، اور بینک میں پیسا چھوڑ گیا ہے ۔

Published on: Jan 16, 2020

جواب # 175996

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa : 476-332/SN=05/1441



شخص مذکور کے والدین ، دادا، دادی اور نانی کا انتقال اگر اس سے پہلے ہی ہو چکا ہے نیز ایک سگے بھائی اور ایک سگی بہن کا انتقال بھی اس سے پہلے ہوا تو صورتِ مسئولہ میں مرحوم کا کل ترکہ (زمین، مکان، روپیہ پیسہ، گاڑی اور دیگر (اثاثہ) بعد ادائے حقوقِ متقدمہ علی الارث، پانچ حصوں میں تقسیم ہوکر دو دو حصے دونوں باحیات بھائیوں کو اور ایک حصہ باحیات بہن کو ملے گا، مرحوم بھائی اور بہن کی اولاد کو صورتِ مسئولہ میں کچھ نہ ملے گا۔



نوٹ: اگر بھائی بہن وغیرہ میں سے کسی کا انتقال مرحوم کے بعد ہوا ہو تو حکم بدل جائے گا، ایسی صورت میں پوری تفصیل لکھ کر دوبارہ استفتاء کرلیں اور اس تقسیم ترکہ کا کالعدم سمجھیں۔ تخریج:



کل حصے   =           5



-------------------------



اخ         =           2



اخ         =           2



اخت      =           1



--------------------------------



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات