India

سوال # 175454

ایک صاحب کے تین بچے ہیں اور سرکاری ملازمت میں ان کا نمبر آجاتاہے، سرکار نے قانون بنارکھا ہے کہ سرکاری ملازمت صرف بچے والے آدمی کو دی جائے گی ،جن صاحب کی نوکری لگی ہے انہوں نے اپنا ایک بچہ اپنے بھائی کے نام کردیاہے اور سرکار کو اپنے دو بچے ہونے کا ثبوت دیدیا اور سرکار سے اپنا ایک بچہ چھپا لیا تو اس آدمی کی نوکری صحیح ہے یا غلط؟

Published on: Dec 25, 2019

جواب # 175454

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa : 365-290/D=04/1441



تنخواہ عمل کے مقابلہ میں ہوتی ہے پس صورت مسئولہ میں جائز کام اور جائز ملازمت کی تنخواہ جائز ہوگی اور نوکری صحیح کہلائے گی نیز اپنے ایک بچہ کو پرورش کے لئے بھائی کو دے دینا بھی جائز ہے؛ البتہ سرکار یا کسی کے سامنے اس کے اپنا بچہ ہونے کا انکار کرنا غلط ہے اور اپنا بچہ ہونے کے اعتبار سے جو اس کے حقوق ہیں وہ اب بھی اصل باپ سے ہی متعلق رہے گے منجملہ ایک حکم یہ بھی ہے کہ اس شخص کے انتقال کے بعد یہ بچہ بھی اپنے باپ کا وارث ہوگا دوسرے ورثہ کا اسے وراثت سے محروم کرنا گناہ ہوگا۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات