Pakistan

سوال # 176544

میں نے بچپن میں آج سے 15 سال پہلے جب میں 15 سال کا تھا دو مرتبہ دو مختلف لڑکوں سے دبر میں بد فعلی کی اور کروائی میں ایک نوجوان لڑکا تھا اور نہیں علم تھا کہ یہ کتنا بڑا گناہ ہے کیا اللہ مجھے معاف کر دے گا ؟میں اب اس کام سے شدید نفرت کرتا ہوں۔

Published on: Feb 23, 2020

جواب # 176544

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa:496-375/sd=6/1441



آپ شرمندگی اور ندامت کے ساتھ اللہ تعالی سے معافی مانگیں اور آئندہ اس گناہ سے بچنے کا پختہ عزم کریں ، انشاء اللہ گناہ معاف ہوجائے گا ، قرآن کریم میں ایمان والوں سے توبہ نصوح کی تاکید کی گئی ہے اور علامہ آلوسی نے روح المعانی میں ابن مردویہ اصبہانی صاحب تفسیر کبیر کے حوالے سے حضرت عبد اللہ بن عباس رضی اللہ تعالی عنہ کی زبانی نقل کیا ہے کہ حضرت معاذ ابن جبل رضی اللہ عنہ نے حضور ﷺ سے معلوم کیا کہ توبہ نصوح کی حقیقت کیا ہے؟حضورﷺ نے ارشاد فرمایا کہ توبہ نصوح یہ ہے کہ بندہ اپنے کیے ہوئے گناہ پر شرمندہ ہو اور اللہ تعالی کی طرف رجوع کرکے معذرت اور معافی طلب کرے اور آئندہ اس گناہ کا (کبھی) ارتکاب نہ کرے، جس طرح نکلا ہوا دودھ تھنوں میں دوبارہ نہیں جاسکتا ہے۔دیکھیے: تفسیر روح المعانی، سورہ تحریم، آیت:۸۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات