عبادات - زکاة و صدقات

INDIA

سوال # 168994

میری شادی ہوئی تب مجھے بائک نہیں ملی نہ ہی میری ڈیمانڈ تھی، پر جب میں پہلی بار شادی کے بعد سسرال گیا تو مجھے میرے سسرال کی طرف سے 50,000 دیئے گئے۔ یہ بول کر دیا گیا کہ یہ گاڑی کا پیسہ ہے۔ میری شادی میرے چچا کی لڑکی سے ۲۰۱۵ء میں ہوئی ہے۔ شادی سے پہلے میں صاحب نصاب نہیں تھا۔ میری بیوی کو سسرال اور میکے سے زیور ملا۔ جب اس زیور پر ایک سال پورا ہو گیا تو میں نے اس کی زکات نکالی جو بائک کا پیسہ مجھے ملا تھا اسے میں نے خرچ نہیں کیا، بینک میں جمع کر دیا۔ کیا بائک کا جو پیسہ مجھے ملا تھا اس پر بھی زکات نکالنی چاہئے؟

Published on: Mar 10, 2019

جواب # 168994

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa:560-499/sd=07/1440



بائک کا جو پیسہ آپ کو ملا تھا، اگر آپ نے اس سے بائک نہیں خریدی، وہ رقم آپ کے پاس موجود ہے اور اس پر ایک سال کا وقت گذرچکا ہے، تو اس رقم کی زکات نکالنا فرض ہے۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات