عبادات - زکاة و صدقات

Qatar

سوال # 133

محترم المقام                                                       السلام علیکم ورحمة اللہ وبرکاتہ


 


میرے خاندان میں کچھ افراد ایسے ہیں جو زکاة کے مستحق ہیں۔ میں اپنی زکاة ماہ رمضان میں ادا کرتا ہوں جو اَب سے چھ ماہ دور ہے۔ لہٰذا ، کیا میں ان مستحقین کو پیشگی زکاة دے سکتا ہوں؟ کیا اس کو زکاة مانا جائے گا ؟ یا یہ صدقہ ہوجائے گا اور مجھے رمضان میں دوبارہ زکاة ادا کرنا ہوگا؟


 


والسلام

Published on: Apr 8, 2007

جواب # 133

بسم الله الرحمن الرحيم

(فتوی: ۱۰۹/ل= ۱۰۹/ل)



صاحب نصاب شخص کا پیشگی زکاة ادا کرنا درست ہے اور یہ زکاة کی طرف سے شمار ہوگا، حولانِ حول (سال گذرنے) کے بعد دوبارہ ادا کرنا ضروری نہیں: فلو عجل ذو نصاب زکاتہ لسنین أو لنصب صح لوجود السبب۔ (شامي: ۳/۲۲۰، ط زکریا دیوبند) اس لیے اگر آپ ان کو پیشگی زکاة دینا چاہیں تو دے سکتے ہیں۔


واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات