India

سوال # 163926

ایک عورت کو رواں ماہ کی اول تاریخ کو فجر نماز ادا کرنے کے بعد خون آنا شروع ہوا..مذکورہ خاتون کو دس روز خون آتا ہے ،مذکورہ عورت کس دن اور کس وقت پر غسل کر کے نماز پڑھنا شروع کرے گی؟

Published on: Aug 6, 2018

جواب # 163926

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa:1199-971/B=11/1439



ایسی عورت گیارہ تاریخ کو فجر کے بعد سے پاک شمار ہوگی، بشرطیکہ اسے اپنی سابقہ عادت کے موافق مکمل دس روز یا دس روز سے زائد خون آئے؛ لہٰذا اگر فجر کا وقت باقی ہو اور گنجائش بھی ہو، تو وقت کے اندر اندر غسل کرکے فجر کی نماز ادا کرے، ورنہ مکروہ وقت ختم ہونے کے بعد نماز پڑھے، اور اگر عادت سے کم (مثلاً سات روز) خون آئے، تو بند ہونے کے بعد نماز کے آخری وقت میں غسل کرکے نماز پڑھنا شروع کردے، أقلہ ثلاثة أیام بلیالیہا فالإضافة لبیان العدد المقدر بالساعات الفلکیة ․․․ وکذا قولہ وأکثرہ عشرة الخ (التنویر مع الدر والرد: ۱/۴۷۴کتاب الطہارة/ باب الحیض، ط: زکریا) فإن لدون عادتہا لم یحل وتغتسل وتصلي وتحتہ في رد المحتار: أي في آخر وقت، المستحب وتأخیرہ إلیہ واجب ہنا․ رد المحتار: ۱/ ۴۹۰/ کتاب الطہارة/ باب الحیض، ط: زکریا)



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات