عقائد و ایمانیات - قرآن کریم

India

سوال # 153462

نئے مکان اور دوکان میں قرآن خوانی کرانا کیسا ہے؟

Published on: Aug 13, 2017

جواب # 153462

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa: 1111-917/D=11/1438



قرآن کریم کی تلاوت خواہ خود کرے یا دوسرے سے کرائے خیر وبرکت کا ذریعہ ہے؛ البتہ مروّجہ قرآن خوانی بہ چند وجوہ قابل ترک ہے؛ کیونکہ اس طرح قرآن پڑھنے اور شرینی وغیرہ تقسیم کرنے کا جو اہتمام کیا جاتا ہے اس کا شریعت میں کوئی ثبوت نہیں، نیز لوگ شرما حضوری یا دباوٴ میں پڑھتے ہیں؛ اس لیے سب سے آسان اور بہتر شکل یہی ہے کہ انفرادی طور پر جتنا ہوسکے از خود دوکان ومکان میں قرآن کی تلاوت کرے، ان شاء اللہ العظیم یہ عمل خیر وبرکت کے لیے کافی رہے گا۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات