عقائد و ایمانیات - تقلید ائمہ ومسالک

India

سوال # 166436

(۱) تقلید کسے کہتے ہیں؟
(۲) اگر ایک چیز پہ دو رائے ہو تو کس رائے کو اختیار کیا جاتا ہے؟

Published on: Oct 29, 2018

جواب # 166436

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa : 243-204/H=2/1440



(۱) فتاویٰ محمودیہ : ۲/۶۲۵، ط: دارالمعارف، میں بحوالہ عقد الجید ہے ”جس شخص پر اعتماد ہو کہ دلیل کے موافق حکم بتائے گا اس کے قول کو تسلیم کرلینا اور اس سے دلیل کا مطالبہ نہ کرنا تقلید ہے“ کذا فی عقد الجید ۔



(۲) اہل ترجیح حضرات وجوہ ترجیح کو ملحوظ رکھ کر جس رائے کو راجح قرار دیں اس کو اختیار کرلیا جائے گا۔ الاعتدال فی مراتب الرجال میں بحوالہ اس سے متعلق عمدہ بحث ہے۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات