معاشرت - طلاق و خلع

India

سوال # 151129

اگر شوہر سے ہنسی مذاق میں یا پھر انجانے میں اپنی عورت کے لیے بیٹا یا ماں جیسے الفاظ نکل جائیں تو کیا حکم ہے؟ آیا نکاح قائم رہے گا یا ٹوٹ جائے گا؟
براہ کرم تھوڑا جلدی جواب دیں۔

Published on: May 18, 2017

جواب # 151129

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa: 889-830/B=8/1438



ایسا کہنا نہ چاہیے، اگر شوہر نے اپنی بیوی کو بیٹا یا ماں کا لفظ کہہ دیا تو اس سے نکاح پر کوئی اثر نہیں پڑتا، نکاح بدستور قائم رہے گا، آپ کسی طرح کا وہم نہ کریں۔



----------------------------



جواب صحیح ہے البتہ میاں بیوی کا آپس میں ایک دوسرے کو ماں، بیٹا وغیرہ کہنا مکروہ ہے؛ لہٰذا آئندہ اس طرح کے الفاظ نہ کہے جائیں۔(د)



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات