عبادات - طہارت

Up

سوال # 175513

سوال غسل کیلئے وضو کرنا سنت ہے، اب اگر کوئی شخص جنبی ہے تو وہ شخص وضو کب کرے گا چونکہ جنبی شخص بغیر غسل کیے پاک نہیں ہوتا تو وہ کس وقت غسل کرے گا؟

Published on: Dec 30, 2019

جواب # 175513

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa : 402-381/M=05/1441



غسل کا مسنون طریقہ یہ ہے کہ پہلے دو ہاتھ گٹوں تک دھوئے پھر شرمگاہ دھوئے اور بدن پر اگر ناپاکی لگی ہے تو اسے دھوئے پھر وضو کرے پھر پورے بدن پر پانی بہائے، غسل کرنے والا چاہے جنبی ہو یا غیر جنبی دونوں کے لئے یہی طریقہ ہے۔ یہ صحیح ہے کہ جنبی شخص جب تک غسل مکمل نہ کرلے وہ پاک نہیں ہوگا لیکن مسنون طریقہ پر غسل یہ ہے کہ وہ ابتداء میں ہی بدن کی ناپاکی دھونے کے بعد وضو کرلے۔ البداء ة بغسل یدیہ وفرجہ ․․․․ وخبث بدنہ إن کان علیہ خبث لئلا یشیع ثم یتوضأ ․․․․ (درمختار)



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات