india

سوال # 169750

حضرت مفتی صاحب، ایک کمپنی ہے جو کہ شیر مارکٹ میں کاروبار کرتی ہے اورجو لوگ اس کمپنی سے جڑے ہوئے ہیں ان سے کہتی ہے کہ آپ 100000 روپیہ کمپنی میں جمع کریں تو ہم آپ کو 24 مہینے میں 200000 دیں گے تو کیا اس متعین شکل میں اس میں پیسہ لگانا میرے لئے جائز ہوگا؟

Published on: Mar 28, 2019

جواب # 169750

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa : 730-571/SN=07/1440



مذکور فی السوال طریقے پر رقم لگاکر منافع کمانا شرعاً جائز نہیں ہے، یہ اپنے ظاہر کے اعتبار سے ”قرض“ دے کر ”سود“ حاصل کرنے کی شکل ہے۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات