عبادات - صوم (روزہ )

india

سوال # 171399

میری بیوی جو الحمدللّہ حاملہ ہے نے حمل کی وجہ سے روزہ نہیں رکھا البتہ اس نے میری شرم گاہ پر براہ راست ہاتھ رکھا جس کی وجہ سے منی خارج ہو گئی جبکہ میں روزہ تھا۔ شریعت میں اس صورت میں مجھ پر اور میری بیوی پر کیا حکم ہے؟ کیا میرا روزہ ٹوٹ گیا؟ روزہ میں اگر ایسے ہی یا بیوی سے بوس وکنار سے مذی خارج ہو تو اس صورت میں کیا حکم ہے؟ دونوں صورتوں میں اگر گناہ ہو تو اس کی کیا تلافی ہے؟ جزاک اللّہ

Published on: Jun 27, 2019

جواب # 171399

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa : 1000-872/D=10/1440



بیوی کو ایسی شہوانی حرکت جب کہ آپ روزے سے تھے نہیں کرنی چاہئے تھی بہرحال وہ توبہ استغفار کرے اور آپ کا روزہ ٹوٹ گیا ایک روزہ کی قضا بعد میں رکھ لیں۔ قال فی الدر: او قَبَّلَ ولو قُبلة فاحشة بان یدغدغ او یمص شفتیہا او لمس ولو بحائل لا یمنع الحرارة ․․․․․․ فانزل قضی فی الصور کلہا (الدر مع الرد: ۳/۳۷۹) ۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات