عبادات - صوم (روزہ )

India

سوال # 171284

مجھے یہ معلوم کرنا ہے کہ میری والدہ شگر کی مریض ہیں اور روزہ رکھنا انکے لئے ممکن نہیں ہو پا رہا ہے لیکن ان کا کہنا ہے کہ اگر یہ سردی کے روزے ہوتے تو ممکن تھا کہ میں رکھ لیتی مگر گرمی میں صبح سے ہی حالت بہت خراب ہو رہی ہے۔ سوال یہ ہے کہ کیا ان کے لئے یہ اجازت ہے کہ وہ گرمی کے روزے چھوڑ دیں اور سردی کا انتظار کریں؟ پھر اگر سردی میں روزے ممکن ہو جائیں تو ان روزوں کی قضا رکھ لیں اور اگر سردی میں بھی ممکن نہ ہوں تو پھر فدیہ ادا کر دیں ؟ یا ان کو اس کی اجازت نہیں ہے اور ابھی ہی فدیہ ادا کرنا ہوگا ؟

Published on: Jul 7, 2019

جواب # 171284

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa:888-749/sd=10/1440



جی ہاں ! اگر آپ کی والدہ ماہ رمضان میں روزہ رکھنے کی استطاعت نہیں رکھتیں ؛ البتہ سردی کے چھوٹے ایام میں روزہ رکھ سکتی ہیں، تو اُن کے لیے سردی کے ایام میں روزے کی قضاء ضروری ہے، ایسی صورت میں اُن کے لیے فدیہ دینا کافی نہیں ہوگا اور اگر آپ کی والدہ اتنی ضعیف ہوجائیں کہ وہ سردی کے چھوٹے دنوں میں بھی روزہ رکھنے پر قادر نہ ہوں اور بظاہر آئندہ بھی روزہ رکھنے کی استطاعت نہ ہو تو اس صورت میں وہ روزوں کے بدلے فدیہ دے سکتی ہیں، ایک روزے کا فدیہ صدقہ فطر کی مقدار کے برابر ہے، یعنی: ایک کلو ۶۳۳/ گرام گیہوں یا اس کی قیمت۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات