عبادات - صلاة (نماز)

India

سوال # 154004

حضرت مفتی صاحب! جب میں قرآن شریف کی تلاوت کرتا ہوں تو نماز میں یا نماز کے علاوہ جب بھی لفظ ”اللہ“ یا ”رب“ آتا ہے تو ”اللہ“ کا دھیان دل و ماغ میں لانے کی کوشش کرتا ہوں۔ آج ظہر کی نماز میں سورہ قدر کی تلاوت کر رہا تھا تو ”فیہا بإذن ربہم“ پر جب پہنچا تو ”ربہم“ کہتے وقت کسی عورت کا خیال (جس سے کچھ معاملہ چل رہا تھا دفتری کام کے متعلق) آگیا۔ چونکہ میری عادت لفظ ”اللہ“ یا ”رب“ کہتے وقت صرف ”اللہ“ کا دھیان کرنے کی تھی اور اس صورت میں ”غیر اللہ“ کا خیال آگیا، تو کیا میرے ایمان میں کچھ فرق آئے گا؟
براہ کرم جلدی جواب دیں۔

Published on: Sep 5, 2017

جواب # 154004

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa: 1385-1269/H=12/1438



اس طرح عورت کے خیال آجانے کی وجہ سے ایمان میں کچھ نقص نہیں آیا، باقی ایمان کی سلامتی کی دعا اور توبہ واستغفار کا اہتمام تو ہمیشہ کرتے ہی رہنا چاہیے۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات