India

سوال # 165119

اگر کسی نے اپنے نابالغ بچہ کی طرف سے قربانی کی جس پر قربانی واجب نہیں ہوئی تھی،اور ساتھ میں یہ بھی نیت کی اس قربانی کی برکت سے اللہ تعالٰی میرے بچے کی بیماری دور فرمائے ، قربانی میں اس طرح کی نیت کی گنجائش ہے یا نہیں؟ اس طرح کی نیت سے قربانی صدقہ ہوگا یا قربانی؟ اس نیت کے بعد گھر والے کو اس جانور کا گوشت کھانا جائز ہے یا نہیں؟ اس نیت سے بڑے جانور میں شرکت کر سکتے یا نہیں؟

Published on: Oct 24, 2018

جواب # 165119

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa:35-70/sd=2/1440



 قربانی میں یہ نیت کرنا کہ اللہ تعالی اس کی برکت سے بچے کی بیماری دور فرمائے ، جائز ہے۔



(۲)قربانی مانی جائے گی۔



(۳) جی ہاں !گھر والے گوشت کھاسکتے ہیں۔



(۴) اس نیت سے بڑے جانور میں شرکت کرسکتے ہیں ۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات