India

سوال # 164909

مدرسہ میں قربانی کے جانور اہل مدرسہ پہلے سے خرید لیتے ہیں اور لوگ یا تو پورے جانور کی رقم دے دیتے ہیں یا کوئی ایک حصہ۔یا دو حصے کی رقم ادا کرتے ہیں اور تعیین ہوتی نہیں ہے کہ کس کا کونسا جانور یا کس کا حصہ کون سے جانور میں۔۔اب اگر کسی وجہ سے جانور مر گیا تو کس کا جانور گیا؟ کیسے حل کر یں گے ؟

Published on: Sep 10, 2018

جواب # 164909

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa:1507-136T/H=12/1439



اہل مدرسہ نے جب ان جانوروں کو خریدا ہے تو وہی اُن جانوروں کے مالک ہوئے اور جب تک کسی جانور میں قربانی کرنے والے شرکاء کی تعیین نہ ہو تو اہل مدرسہ ہی مالک رہیں گے ایسی صورت میں جانور مرے گا تو اہل مدرسہ کا مرے گا اور جب کسی جانور میں شرکاء متعین کردیئے تو شرکاء مالک ہوگئے اگر ایسی صورت میں مرا تو شرکاء کا مرا۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات