عبادات - جمعہ و عیدین

India

سوال # 151260

ہماری مسجد میں جگہوں کی تنگی کی وجہ سے جمعہ کے دن دو جماعت کرنی پڑتی ہے ، دوسری جو جماعت ہوگی اس میں اذان ثانیہ دی جائے گی یا نہیں ؟ بعض علماء کہتے ہیں کہ ”یہ جماعت ثانیہ کے حکم میں ہے لہٰذا اس میں نہ اذان ہوگی اور نہ ہی اقامت “، اور دلیل میں جماعت ثانیہ کی عبارت پیش کرتے ہیں۔ بہرکیف دوسرے فریق یہ کہتے ہیں کہ جمعہ کی نماز پانچ وقت کی نماز سے الگ ہے ، لہٰذا اس میں الگ سے اذان اور اقامت کہنا ضروری ہے اور دلیل میں قرآن کی آیت ”وإذا نودی للصلوة فاسعوا إلی ذکر اللہ“ کو پیش کرتے ہیں ۔
اس میں سے جو بھی فریق حق پر ہے برائے مہربانی اس کی تعیین کی جائے اور دلائل کے ساتھ پیش کیا جائے، اگر جمعہ کی نماز مسئلہ ہذا میں پانچ وقت کی نماز سے الگ ہے تو اس کی دلیل اور اصول کو پیش کیا جائے اور اگر ایک ہے تو اس کی بھی دلیل مع حوال پیش فرمائیں تو بڑا ہی احسان اور کرم ہوگا۔

Published on: May 16, 2017

جواب # 151260

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa: 1017-922/sn=8/1438



ایک مسجد میں جمعہ کی دو جماعتیں کرنا شرعا مکروہ ہے؛ اس لیے یہ معمول ترک کردیں، اگر جگہ تنگ ہو تو کسی میدان یا ہال وغیرہ میں دوسری جماعت کرلیا کیں، جوازِ جمعہ کے لیے ”مسجد“ ہی میں ادا کیا جانا ضروری نہیں ہے، اگر دو جماعت کا معمول ترک کردیں گے تو یہ نزاع بھی باقی نہ رہے گا، نیز نماز بھی بلاکراہت ادا ہوجائے گی۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات