عقائد و ایمانیات - اسلامی عقائد

USA

سوال # 166145

سوشل میڈیا میں کچھ پوسٹ چل رہی ہیں کہ والدین کے گناہ کا بوجھ ان کی اولاد پر پڑتاہے، تو کیا اسلامی شریعت کے مطابق یہ درست ہے؟ مثال کے طورپر ایک پوسٹ ہے جس میں لکھاتھا کہ جو اولاد اپنے والدین کی بات نہیں سنتی ہے تو یہ ہوسکتاہے کیوں کہ والدین نے ماضی میں بہت سارے گناہ کئے ہوں گے تو اگرچہ انہوں نے اپنے گناہوں سے توبہ کرکے اچھے اور دینی طریقے سے اپنی اولاد کی پرورش کی ہو،اب اگر اولاد کسی سنگین حادثہ کی شکار ہوجاتی ہے یا اس کی طبیعت اچھی نہیں رہتی ہے تو یہ اس کے والدین کے گناہوں کی وجہ سے ہوتاہے۔

Published on: Oct 28, 2018

جواب # 166145

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa:154-128/sd=2/1440



 جب کہ والدین نے گناہوں سے توبہ کرلی اور اولاد کی دینی تربیت بھی کی، تو اولاد کے کسی حادثہ کا شکار ہونے یا صحت وغیرہ خراب ہونے کو والدین کے پرانے گناہوں کا نتیجہ قرار دینا کیسے درست ہوسکتا ہے ؟ والدین اگر اولاد کے شرعی حقوق اداء کریں، تو عند اللہ وہ بری الذمہ ہوتے ہیں، مذکورہ پوسٹ صحیح نہیں ہے ۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات