معاملات - سود و انشورنس

India

سوال # 168749

میں ایک سرکاری ملازم ہوں میرا سالانہ انکم ٹیکس تقریبا 80 ہزار روپے کٹتا ہے میرے پاس کچھ نقد روپیہ جمع تھے جس کی میں نے فکسڈڈپوزٹ کروادی ایک سرکاری بینک میں وہاں سے مجھ کو تقریبا 40 ہزار روپے سالانہ ملتے ہیں کیا میں اس کو انکم ٹیکس بچانے کے لئے استعمال کر سکتا ہوں۔

Published on: Mar 11, 2019

جواب # 168749

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa : 635-622/M=07/1440



سود حاصل کرنے کی غرض سے اپنی رقم بینک وغیرہ میں فکس ڈپوزٹ کروانا، ناجائز ہے، اس سے بچنا چاہئے آئندہ اس کا خیال رکھیں فی الوقت آپ نے جس سرکاری بینک میں اپنی رقم فکس ڈپوزٹ کروائی ہے اگر مقررہ میعاد سے پہلے رقم نکلوانا دشوار ہے تو بحالت مجبوری صورت مسئولہ میں سرکاری بینک سے حاصل شدہ سودی رقم، انکم ٹیکس کی ادائیگی کے لئے استعمال کر سکتے ہیں۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات