معاملات - سود و انشورنس

India

سوال # 166699

حضرت مفتی صاحب دامت برکاتہم دراصل عرض یہ کرنا تھا کہ میں نے کچھ عرصہ نوکری کی تلاش کی لیکن مجھے نوکری نہیں مل پائی آخرکار میں تھک ہار کر بیٹھ گیا اب میرے پاس کاروبار کے لیے کوئی سازوسامان اور کوئی پیسوں کا انتظام نہیں تھا تو میں نے بینک سے قرضہ لے کر کپڑا بنانے کی مشین خریدی اور الحمدللہ اب میں کپڑا بناکر کاروبار کر رہا ہو ں تو کیا وہ کاروبار میرے لیے جائز ہوگا یا نہیں؟لیکن اصل رقم مجھے پانچ سال تک بینک کو سود سمیت واپس کرنا ہے تو کیا وہ کاروبار اور اس سے آنے والی کمائی میرے لیے جائز ہوگی یا نہیں؟ برائے مہربانی تفصیلی جواب فرمادیں۔

Published on: Nov 15, 2018

جواب # 166699

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa:249-173/SD=3/1440



 سودی قرض سے جو کپڑے کی مشین خریدی گئی ، اُس سے جائز طریقے پر کیا جانے والا کار وبار اور حاصل شدہ آمدنی حلال ہے ؛ البتہ سودی قرض لینے کا گناہ ہوگا، جس سے توبہ استغفار ضروری ہے اور جلد از جلد سودی قرض اداء کرکے ذمہ فارغ کرلینا ضروری ہے ۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات