عبادات - حج وعمرہ

Pakistan

سوال # 6992

اگر کوئی عورت حج کے دوران حیض سے پاک نہیں ہے اور طواف زیارت نہیں کیا ہے،تبھی اس کی واپسی کا وقت (پہلے سے متعینہ فلائٹ) آجاتا ہے۔ تو ا س کو بلا طواف زیارت ادا کئے ہوئے مکہ (سعودی عربیہ) چھوڑنے کا کیا طریقہ ہے؟ فلائٹ کا وقت بدلا نہیں جاسکتا ہے۔

Published on: Aug 21, 2008

جواب # 6992

بسم الله الرحمن الرحيم

فتوی: 756=756/ م


 


اگر عورت ایام نحر میں حیض میں مبتلا ہوجائے اور ناپاکی ہی کی حالت میں ایام نحر مکمل گذرجائیں، تو ایسی صورت میں طواف زیارت کو ایام نحر سے موٴخر کرنے کی وجہ سے عورت گنہگار نہ ہوگی، اور نہ ہی اس پر کوئی دم لازم ہوگا، البتہ پاک ہونے کے بعد طواف زیارت کرنا لازم ہے، اوراگر ایامِ نحر گذرجانے کے بعد بھی پاک نہیں ہوئی اور روانگی کا وقت آگیا، اور فلائٹ کا وقت بدلا نہیں جاسکتا تو ایسی مجبوری میں اُسی حالت میں طوافِ زیارت کرلے، اس سے طواف کا فریضہ ادا ہوجائے گا اور جرمانہ میں ایک اونٹ یا گائے یا بھینس کی قربانی واجب ہوگی، جس کی قربانی حدودِ حرم میں کرنا لازم ہوگا۔


واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات