عبادات - حج وعمرہ

United Kingdom

سوال # 6986

جواب نمبر 5985 سے متعلق: توسیع منیٰ-سعودی حکومت مزدلفہ میں منی کی حد کے باہر کچھ ٹینٹ لگارہی ہے۔ سعودی علماء نے فتوی دیا ہے کہ یہ جگہ منی تصور کی جائے گی اوراس کو منی کی توسیع کا نام دیا۔ ان دنوں بہت زیاد ہ بھیڑ کی وجہ سے سعودی حکومت منی کی حد کے باہر بھی کچھ ٹینٹ لگا رہی ہے اور یہ ٹینٹ مزدلفہ میں واقع ہیں۔ سعودی علماء نے فتوی دیا ہے کہ جگہ کی کمی کی وجہ سے یہ جگہ منی میں شمار کی جائے گی اورانھوں نے اس کو منی کی توسیع کا نام دیا۔ میرا سوال یہ ہے کہ اوپر مذکور اسباب کی وجہ سے اگر توسیع کی گئی ہے تو مزدلفہ کے درمیان حج کے دنوں میں اگر کسی شخص کا ٹینٹ اس جگہ میں ہے جوپہلے مزدلفہ کا حصہ تھا اور اب سعودی کہتے ہیں کہ یہ منی کا حصہ ہے اور وہ شخص اپنے ٹینٹ میں رہتا ہے تو کیا اس کے لیے اپنے ٹینٹ میں قیام کرنا درست ہوگا؟ اورکیا اس کا واجب ادا ہوجائے گا؟ اوپر مذکور صورت حال میں اگر وہ اسی جگہ اور ٹینٹ میں قیام کرتا ہے توکیا منی اور مزدلفہ کی سنتیں ادا ہوجائیں گیں؟ برائے کرم حوالہ کے ساتھ جواب عنایت فرماویں۔

Published on: Aug 30, 2008

جواب # 6986

بسم الله الرحمن الرحيم

فتوی: 1786/ ب= 200/ تب


 


ہمیں یہ معلوم ہوا ہے کہ وہ جگہ پہلے ہی سے منیٰ کے حدود میں تھی۔ اب اس کی صحیح حد بندی کردی گئی ہے۔ اور جو بات آپ نے تحریر فرمائی ہے اگر یہ صحیح ہے تو بھیڑ اور ازدحام کی وجہ سے تبعاً وہ منی کے حکم میں شمار ہوگا۔


واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات