عبادات - حج وعمرہ

India

سوال # 170887

ایک عورت عمرہ کرنے کے ارادے سے دہلی سے جدہ کے لیے روانہ ہوتی ہے اور وہ اپنے احرام کی نیت دہلی سے ہی کرتی ہے اسی وقت اس کو معلوم ہوتاہے کہ اس کو وزٹ ویزا ہونے کی وجہ سے شرط لگادی گئی ہے کہ وہ عمرہ نہیں کرسکتی ،ایسی صورت میں ہوسکتاہے کہ جدہ ایئرپورٹ کے حکام اس کو احرام کی حالت میں مکہ جانے سے روک دے ، ایسی صورت میں وہ کیا کرے گی ؟ کیا وہ اپنا احرام ختم کرکے مکہ چلی جائے اور ایک دم دے کر وہ مسجد عائشہ سے از سرے نو احرام باندھے اور عمرہ کرے ؟یا وہ جدہ سے ٹیکسی کے ذریعہ مدینہ چلی جائے اور وہاں سے احرام باندھ کر ٹیکسی یا بس کے ذریعہ مکہ جائے اور عمرہ کرے؟ براہ کرم، جواب دیں۔ جزاک اللہ

Published on: Jul 13, 2019

جواب # 170887

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa : 927-873/M=10/1440



صورت مسئولہ میں اگر عورت احرام باندھ چکی ہے یعنی احرام کی نیت سے تلبیہ پڑھ چکی ہے تو اب وہ اپنا احرام ختم نہیں کر سکتی، اگر جدہ پہونچ کر وہاں سے مکہ جانے کی اجازت ہو جاتی ہے تو احرام ختم کرنے کی ضرورت ہی نہیں، اور نہ مسجد عائشہ جاکر از سر نو احرام باندھنے کی ضرورت ہے، بلکہ اسی احرام سے حرم شریف جاکر عمرہ کرلے اور اگر حکام کے خوف سے عورت نے اپنے احرام کی حالت کو چھپانے کے لئے ممنوعات احرام میں سے موجب دم کسی جنایت کا ارتکاب کرلیا ہے تو اس کی وجہ سے عورت پر دم واجب ہوگا اور اگر جدہ پہونچنے کے بعد وہاں سے سیدھا مکہ جانے کی اجازت نہ ملے لیکن مدینہ ہوکر عورت مکہ جاسکتی ہو تو جدہ سے مدینہ چلی جائے اور پھر وہاں سے مکہ جاکر عمرہ کرلے۔ اس صورت میں بھی عورت کو مدینہ سے نیا احرام باندھنے کی ضرورت نہیں بلکہ سابقہ احرام کافی ہے ہاں اگر اس دوران کسی موجب دم جنایت کا ارتکاب ہوا ہے تو اس کے لئے دم دینا ہوگا ورنہ نہیں۔ اور عورت کو خلاف قانون عمرہ کرنے سے بچنا چاہئے۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات