عبادات - حج وعمرہ

bangladesh

سوال # 166228

کیا فرماتے ہیں علماء دین ومفتیان شرع متین مسئلہ ذیل کے بارے میں کہ میرے نانا کے انتقال ہونے کے بعد میری ماں وراثت کے طور پر نصف بیگہ زمین کی مالک ہوئی، لیکن مختلف وجہ سے آٹھ برس گزر گئی، حالانکہ موروثی زمین ان کے اولاد کے درمیان اب تک تقسیم نہیں ہوئی، جس کی وجہ سے میری ماں کی حصہ ان کی قبضہ میں نہیں آئی۔ اب سوال یہ ہے کہ مذکورہ زمین کی وجہ سے میری ماں پر حج فرض ہوا یا نہیں؟

Published on: Oct 31, 2018

جواب # 166228

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa : 175-157/M=2/1440



صورت مسئولہ میں نانا مرحوم کا ترکہ جلد تقسیم کرلینا چاہئے اور جب تک میراث کی شرعی تقسیم کے بعد ماں کا مقررہ حصہ ان کے قبضہ و تصرف میں نہ آجائے اس وقت تک اس موروثی زمین کو مال کے نصاب میں شمار نہیں کیا جائے گا اور نہ اس کی وجہ سے حج فرض کا حکم ہوگا۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات