India

سوال # 58850

ملک نیپال میں مرغیوں کے بیچنے والے جب ان کو ذبح کرکے خریدار کو دیتے ہیں تو ان کے ذبح کرنے کا طریقہ یہ ہوتاہے کہ پہلے اس کو ذبح کرتے ہیں اور پھر ان کو کھولتے گرام پانی میں تقریبا ً تین چار منٹ ڈالے رکھتے ہیں ،اس کے بعد ان کے پر اور گندگی نکالتے ہیں۔ ان کا یہ عمل شرعی طورپر کیسا ہے؟ اور کیا اس کا گوشت کھانا اچھا ہے؟

Published on: May 11, 2015

جواب # 58850

بسم الله الرحمن الرحيم

Fatwa ID: 372-372/Sd=7/1436-U

مرغی کو ذبح کرنے کے بعد اگر اس کی آلائش اور گندگی نکالنے سے پہلے کھولتے ہوئے گرم پانی میں اتنی دیر ڈال دیا جائے کہ جس سے اس کی نجاست گوشت میں سرایت کر جائے تو ایسی صورت میں مرغی کا گوشت ناپاک ہوجائے گا اور اس کا کھانا جائز نہیں ہوگا، گویا گوشت کا ناپاک ہونا دو شرطوں کے ساتھ مقید ہے (۱) پانی کا غلیان (جوش) کی حد تک گرم ہونا (۲) مرغی کو اتنی دیر پانی میں رکھنا کہ نجاست کا اثر گوشت میں سرایت کرجائے۔ لہٰذا صورت مسئولہ میں اگر ملک نیپال میں مرغی بیچنے والے اس طرح سے مرغیاں ذبح کرتے ہیں کہ جس میں مذکورہ دونوں چیزیں بائی جاتی ہیں، تو ان کا یہ عمل غیرشرعی ہوگا اور اس طریقے پر جو مرغیاں ذبح کی جائیں گی، ان کا گوشت کھانا جائز نہیں ہوگا۔ قال الحصکفي: وکذا دجاجة ملقاة حالة علی الاء للنتف قبل شقہا - قال ابن عابدین: والعلةُ -اللہ اعلم- تشربہا النجاسة بواسطة الغلیان، وعلیہ اشتہر أن اللحم السمیط بمصر نجس، لکن العلة المذکورة لا تثبت ما لم یمکث اللحم بعد الغلیان زمانا یقع فی مثلہ التشرب والدخول فی باطن اللحم- إلخ (الدر المختار مع رد المحتار: ۱/۵۴۴، ط: زکریا)

واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات