India

سوال # 170818

حضرت میں گریجویشن کیا آخری سال کا اسٹوڈنٹ ہوں اور میری پڑھائی میرے شہر سے پوری ہونے والی ہے لیکن میں اپنی پڑھائی کے ساتھ ساتھ قرآن شریف کو بہت اچھے سے پڑھنا چاہتا ہوں اس لئے میں نے ایک قریب کے مدرسے میں جانا شروع کیا ہے میرے پھوپھا کے لڑکے پنجاب کی ایک بڑی یونیورسٹی میں پروفیسر ہیں اور مجھے وہاں آگے کی پڑھائی کے لیے بلا رہے ہیں پر مجھے لگتا ہے کہ اگر میں وہاں چلا گیا تو میں قرآن شریف کی تعلیم سے دور ہو جاؤں گا اسی لیے میں نے سوچا اپنے مقام پر رہ کر ہی کوئی چھوٹے کولج پڑھائی کر لوں گا اور قرآن شریف کی تعلیم بھی ساتھ ساتھ حاصل کرتا رہوں گا پر پھر بھی میں ایک الجھن میں تھا کہ میرا وہاں جانا ٹھیک ہے یا نہیں اس لیے میں نے رات کو سوتے وقت استخارہ کیا تھا اور رات کو خواب میں میں نے دیکھا کہ " میں اپنے گاؤں کی مسجد میں بیٹھا ہوں اور میرے سامنے آ قرآن شریف رکھا ہے میں نہیں جانتا کہ رات ہو رہی تھی یا دن میں ہی اس قدر اندھیرا تھا کہ میں دو موم بتیاں جلا کر قرآن شریف پڑھنے کی کوشش کر رہا تھا اور کبھی ہواؤں کے جھونکے سے موم بتیاں بجھ بھی رہی تھی اور میں ان کو پھر سے جلا رہا تھا اور بادر بجلی کے اس قدر تیز کڑک آواز تھی کہ اتنی تیز آواز میں نے کبھی اپنی زندگی میں نہیں سنی اچانک پتہ نہیں ہوا چلتی ہے یا قرآن شریف میں اپنی طاقت ہے کہ قرآن شریف مجھ سے چھوٹنے کی کوشش کرتا ہے اور میں قرآن شریف کو پکڑے رکھتا ہوں لیکن جب قرآن شریف بہت ہی زیادہ طاقت لگاتا ہے تو میں قرآن شریف کو اپنے سینے سے لگا لیتا ہوں اور پھر قرآن شریف کو کھول کر قرآن شریف کو پڑھنے کی کوشش کرتا ہوں اچانک دیکھتا ہوں کہ قرآن شریف کے پیج ہوا کی وجہ سے پھٹنے سے لگتے ہیں پھر میں قرآن شریف کو چھوڑ دیتا ہوں بس یہی پر میرا خواب پورا ہو جاتا ہے اور میری آنکھ کھل "جاتی ہے ..حضرت خواب کی تعبیر بتا دیجئے جی یہ ایک اچھا خواب ہے یا برا خواب ہے اور مجھے کیا کرنا چاہیے؟

Published on: May 26, 2019

جواب # 170818

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa : 1100-905/H=09/1440



خواب تو برا نہیں ہے؛ البتہ تعبیر یہ ہے کہ قرآن شریف کی تعلیم میں کچھ رکاوٹیں آسکتی ہیں اگر ایسا ہو تو ان رکاوٹوں کو دور کرکے تعلیم جاری رکھیں، ہمت ہار کر چھوڑ نہ بیٹھیں۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات