INDIA

سوال # 169212

یا راسخی العلم میرا ایک دوست ہے جسے نیند بہت آتی ہے جس کی وجہ سے اس کی فجر کی نماز فوت ہو جاتی ہے بہت کوششوں سے بھی کم نہیں ہوئی تو اسے بتایا گیا کہ آپ اپنے کان میں اذان پڑوا لیں تو کیا یہ جائز ہے اگر نہیں تو کوئی دوسرا حل بتا دیجیے نیند کو کابو کرنے کا۔

Published on: Mar 13, 2019

جواب # 169212

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa : 780-672/H=07/1440



اِس غرض کے لئے کان میں اذان پڑھوانے کے جواز کی صراحت نہیں ملی نیند سے بیدار ہونے کے لئے رات کو جلد سوئیں اور موبائل یا گھڑی وغیرہ میں الارَم لگادیں گھر کے افراد سے کہہ دیں وہ اٹھا دیا کریں آنکھ نہ کھلے تو پانی کا چھینٹا منہ پر لگا دیا کریں اس سب کے باوجود جس دن جماعت فجر چھوٹ جائے تو مکروہ وقت ختم ہونے پر دس نفلیں پڑھ لیا کریں اور اس سے پہلے دن کی کل آمدنی غرباء کو دیدیا کریں۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات